• Serenity Literature Team •

Poetry of Parveen shakir

Urdu Poetry of Parveen Shakir Ghazal of Parveen Shakir Sad Poetry of Parveen Shakir Love Poetry of Parveen Shakir Romantic Poetry of Parveen Shakir Parveen Shakir best poetry Parveen Shakir Image

پروین شاکر، 24 نومبر 1952 کو پاکستان کے شہر کراچی میں پیدا ہوئیں۔ آپ کی زندگی 26 دسمبر 1994 کو 42 سال کی عمر میں ایک کار حادثے میں مختصر ہوگئی۔

Ghazals of Parveen Shakir

پروین شاکر کی غزلیں

مشکل ہے کہ اب شہر میں نکلے کوئی گھر سے ✧

Nazams of Parveen Shakir

پروین شاکر کی نظمیں

! اتنا معلوم ہے✧

لیکن بڑی دیر ہو چکی تھی✧

پذیرائی✧

آج کی شب تو کسی طور گزر جائے گی ✧

واہمہ ✧

جدائی کی پہلی رات ✧

مجھے مت بتانا ✧

خود سے ملنے کی فرصت کسے تھی✧

ایکسٹیسی ✧

کنگن بیلے کا ✧

ہوا جامِ صحت تجویز کرتی ہے✧

گئے جنم کی صدا ✧

فبأیّ آلاء ربکما تکذبٰن ✧

ایک منظر ✧

ڈیوٹی ✧

سلام✧

ضد ✧

بُلاوا ✧

مشورہ ✧

آئینہ ✧

چاند رات✧

خواب ✧

وہ باغ میں میرا مُنتظر تھا ✧

نہیں میرا آنچل میلا ہے ✧

اعتراف ✧

وہی نرم لہجہ ✧

اوتھیلو✧

ایک دوست کے نام ✧

صرف ایک لڑکی✧

A few words about Parveen Shakir and her Poetry

پروین شاکر اور ان کی شاعری کے متعلق چند الفاظ

Notable poetess Parveen Shakir, whose Urdu poetry has captivated hearts and minds for decades. Parveen Shakir’s ghazals and many of Parveen Shakir’s poems became very popular. Parveen Shakir, born on November 24, 1952 in Karachi, Pakistan. Parveen Shakir was a literary sensation whose intelligence, creativity, ghazals, poems and poetry left an indelible mark on the world of Urdu poetry.

Parveen Shakir started her poetry journey at a young age, as she had a deep love for literature and showed the world the natural talent of expressing her feelings through words in the form of ghazals and poems. Parveen Shakir fearlessly pursued her passion for poetry despite social expectations and challenges faced by women in her time. Parveen Shakir became a symbol of women’s empowerment through her poetry and Parveen Shakir’s poetry broke the barriers limiting women in the literary sphere. Parveen Shakir’s ghazals boosted the morale of women. Parveen Shakir’s poems have a unique place in this regard.

Parveen Shakir’s poetic style was a seamless blend of modernity and traditional Urdu poetry. Parveen Shakir’s Urdu poetry is characterized by simplicity, depth and emotional sentiments. Parveen Shakir’s poetry covers a wide range of topics, from love ghazals and romance ghazals to social issues and women’s rights. Parveen Shakir’s Urdu poetry is full of raw honesty, delicate sensitivity, and deep understanding of human nature. Parveen Shakir’s poetry made her relevant to all walks of life. Parveen Shakir’s ghazals and poems brought Parveen Shakir to the heights of fame.

Parveen Shakir’s first collection of Urdu poetry, “Khushboo”, was published in 1976, bringing her immediate recognition and acclaim. Parveen Shakir’s ghazals and poems were included in the poetry collections. With her subsequent collections, Parveen Shakir continued to mesmerize readers with her unique poetic voice and ghazals and poems written with extraordinary talent. Parveen Shakir’s poetry collections include names such as “Sadbarg” called Marsh Marigold and “Kaf-e-Aina” meaning the edge of a mirror. Parveen Shakir’s Urdu poetry was highly appreciated. Her words resonated deeply. Parveen Shakir’s ghazals and poems easily touched the hearts of those who encountered her work of Urdu poetry.

Parveen Shakir received numerous awards throughout her career for her services to Urdu poetry in Urdu literature. Parveen Shakir’s poetry not only celebrated the power of love and emotions but also challenged social norms by advocating gender equality and social justice. Parveen Shakir’s unwavering courage to address sensitive issues through her Urdu poetry, through ghazals and poems, has earned her a special place in the hearts of her readers and they appreciated Parveen Shakir for being the voice of change. Parveen Shakir’s unique ghazals and poems are dear to every heart.

Tragically, Parveen Shakir’s life was cut short on December 26, 1994 at the age of 42 in a car accident. However, Parveen Shakir’s legacy lives on through the ghazals and poems she wrote. Parveen Shakir’s Urdu poetry continues to inspire and touch countless lives today. Parveen Shakir remains an eternal symbol of resilience, passion and artistry. Her name will always remain in the field of Urdu poetry. Parveen Shakir’s ghazals and poems will always be remembered.

Parveen Shakir was a poetess whose words crossed barriers and created a literary revolution. Her profound insight into the human condition in Urdu poetry, her boldness in expressing her emotions, and her unwavering commitment to social change, Parveen Shakir’s captivating ghazals and poems make her a true icon of Urdu poetry. Parveen Shakir’s work will always be celebrated as a testament to the power of language and the enduring influence of a poetic voice. Parveen Shakir’s poetry dares to challenge norms. The ghazals and poems written by Parveen Shakir are proof of her literary skill.

Parveen Shakir’s poetry won many awards. In 1985 she received the Dr. Muhammad Iqbal Award and in 1986 she received the USIS Award. Her Urdu poetry was also given the Faiz Ahmed Faiz International Award. Parveen Shakir was also honored with the country’s Waqi Award “Pride of Performance” for her ghazals and poems. Parveen Shakir was a great poetess in Urdu literature, the subjects of her Urdu poetry were mostly women and love. Parveen Shakir’s ghazals and poems reflect love.

After Parveen Shakir’s death, one of her close associates, Parveen Qadir Agha, opened a trust in Parveen Shakir’s name. Parveen Shakir Trust organizes an event every year and in this event gives “Aks-e-Khushbu” award in memory of Parveen’s Ghazals and Poems written in Urdu poetry.

If the works of Parveen Shakir are mentioned, the following names are mentioned in her famous works of Urdu poetry, in which the ghazals and poems of Parveen Shakir are written:
• Khushbo 1976
• Sudberg 1980
• Khud kalami 1990
• Inkar 1990s
• Mah e Tamam 1994
• Kaf-e-Aina _ a collection of her Urdu poetry books
• Ghosha Chasham – a collection of her newspaper columns

قابل ذکر شاعرہ پروین شاکر، جن کی اردو شاعری نے کئی دہائیوں سے دلوں اور ذہنوں کو مسحور کر رکھا ہے۔ پروین شاکر کی غزلیں اور پروین شاکر کی متعدد نظمیں بہت مقبول ہوئیں۔ پروین شاکر، 24 نومبر 1952 کو پاکستان کے شہر کراچی میں پیدا ہوئیں، پروین شاکر ایک ایسی ادبی سنسنی خیز شخصیت تھیں جن کی ذہانت، تخلیقی صلاحیتوں، غزلوں، نظموں اور شاعری نے اردو شاعری کی دنیا پر انمٹ نقوش چھوڑے۔

پروین شاکر نے چھوٹی عمر میں شاعری کا سفر شروع کر دیا، کیونکہ وہ ادب سے گہری محبت رکھتی تھیں اور الفاظ کے ذریعے اپنے جذبات کے اظہار کا فطری ہنر انھوں نے غزلوں اور نظموں کی صورت میں دنیا کو دکھایا۔ پروین شاکر نے سماجی توقعات اور اپنے زمانے میں خواتین کو درپیش چیلنجوں کے باوجود بےخوفی سے اپنے شاعری کے شوق کو آگے بڑھایا۔ پروین شاکر خواتین کو اپنی شاعری سے بااختیار بنانے کی علامت بنیں اور پروین شاکر کی شاعری نے ادبی دائرے میں خواتین کو محدود کرنے والی رکاوٹوں کو توڑ دیا۔ پروین شاکر کی غزلوں نے خواتین کے حوصلے بڑھائے۔ اس سلسلے میں پروین شاکر کی نظموں کا ایک منفرد مقام ہے۔

پروین شاکر کا شاعرانہ انداز جدیدیت اور روایتی اردو شاعری کا ایک ہموار امتزاج تھا۔ پروین شاکر کی اردو شاعری کی خصوصیت سادگی، گہرائی اور جذباتی جذبات ہیں۔ پروین شاکر کی شاعری میں محبت سے متعلق غزلوں اور رومانس سے متعلق غزلوں سے لے کر سماجی مسائل اور خواتین کے حقوق تک بہت سے موضوعات موجود ہیں۔ پروین شاکر کی اردو شاعری خام ایمانداری، نازک حساسیت، اور انسانی فطرت کے بارے میں گہری تفہیم سے بھری ہوئی ہے۔ پروین شاکر کی شاعری نے ان کو زندگی کے تمام شعبوں سے تعلق رکھنے والا بنا دیا۔ پروین شاکر کی غزلوں اور نظموں نے پروین شاکر کو شہرت کی بلندیوں پر پہنچا دیا۔

پروین شاکر کی اردو شاعری کا پہلا مجموعہ "خوشبو" 1976 میں شائع ہوا، جس نے ان کی فوری پہچان اور تعریف کی۔ شاعری کے مجموعوں میں پروین شاکر کی غزلیں اور نظمیں شامل ہوئیں۔ اس کے بعد کے مجموعوں کے ساتھ پروین شاکر اپنی منفرد شاعرانہ آواز اور غیر معمولی صلاحیتوں سے لکھی گئی غزلوں اور نظموں سے قارئین کو مسحور کرتی رہیں۔ پروین شاکر کی شاعری کے مجموعوں میں "صد برگ" جسے مارش میریگولڈ کہا جاتا ہے اور "کفِ آئینہ" جس کے معنی آئینے کا کنارہ ہے، جیسے نام ملتے ہیں۔ پروین شاکر کی اردو شاعری کو بہت سراہا گیا۔ ان کے الفاظ دل کی گہرائیوں سے گونجتے تھے، پروین شاکر کی غزلیں اور نظمیں آسانی سے ان لوگوں کے دلوں کو چھوتی تھیں جنہوں نے ان کی اردو شاعری کے کام کا سامنا کیا۔

پروین شاکر کو اپنے پورے کیرئیر کے دوران اردو ادب میں ان کی اردو شاعری کی خدمات کے لیے متعدد ایوارڈز ملے۔ پروین شاکر کی شاعری نے نہ صرف محبت اور جذبات کی طاقت کا جشن منایا بلکہ صنفی مساوات اور سماجی انصاف کی وکالت کرتے ہوئے معاشرتی اصولوں کو بھی پروین شاکر کی غزلوں اور نظموں نے بھرپور چیلنج کیا۔ حساس مسائل کو اپنی اردو شاعری کے ذریعے، غزلوں اور نظموں کے ذریعے حل کرنے کی پروین شاکر کی غیر متزلزل ہمت نے انھیں اپنے قارئین کے دلوں میں ایک خاص مقام دیا، جنہوں نے ایک قدامت پسند معاشرے میں پروین شاکر کی اردو شاعری کی شکل میں تبدیلی کی آواز ہونے کی وجہ سے پروین شاکر کی تعریف کی۔ پروین شاکر کی منفرد غزلیں اور نظمیں ہر دل عزیز ہیں۔

افسوسناک بات یہ ہے کہ پروین شاکر کی زندگی 26 دسمبر 1994 کو 42 سال کی عمر میں ایک کار حادثے میں مختصر ہوگئی۔ تاہم، پروین شاکر کی میراث ان کی لکھی ہوئی غزلوں اور نظموں کے ذریعے زندہ ہے۔ پروین شاکر کی اردو شاعری آج بھی بے شمار زندگیوں کو متاثر کرتی ہے اور چھوتی ہے۔ پروین شاکر لچک، جذبے اور فنکارانہ مہارت کی ابدی علامت بنی ہوئی ہیں۔ اردو شاعری کے میدان میں ان کا نام ہمیشہ باقی رہنے والا ہے۔ پروین شاکر کی غزلوں اور نظموں کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔

پروین شاکر ایک ایسی شاعرہ تھیں جن کے الفاظ نے رکاوٹوں کو عبور کیا اور ادبی انقلاب برپا کیا۔ انسانی حالت کے بارے میں اردو شاعری میں ان کی گہری بصیرت، اپنے جذبات کے اظہار میں ان کی دلیری، اور سماجی تبدیلی کے لیے ان کی غیر متزلزل وابستگی، پروین شاکر کی دلچسپ غزلیں اور نظمیں انھیں اردو شاعری کا حقیقی آئیکن بناتی ہے۔ پروین شاکر کا کام ہمیشہ زبان کی طاقت اور ایک شاعرانہ آواز کے لازوال اثر کے ثبوت کے طور پر منایا جائے گا۔ پروین شاکر کی شاعری اصولوں کو چیلنج کرنے کی ہمت رکھتی ہے۔ پروین شاکر کی لکھی گئی غزلیں اور نظمیں ان کی ادبی مہارت کا ثبوت ہیں۔

پروین شاکر کی شاعری نے بیشتر اعزازات حاصل کیے۔ 1985ء میں انھیں ڈاکٹر محمد اقبال ایوارڈ ملا اور 1986ء میں یو ایس آئی ایس ایوارڈ ملا۔ ان کی اردو شاعری کو فیض احمد فیض انٹر نیشنل ایوارڈ بھی دیا گیا۔ پروین شاکر کو ان کی غزلوں اور نظموں کی بنا پر ملک کے وقیع ایوارڈ "پرائڈ آف پرفارمنس" سے بھی نوازا گیا۔ پروین شاکر اردو ادب میں بہت عظیم شاعرہ تھیں ان کی اردو شاعری کے موضوع زیادہ تر عورت اور محبت کے ہی اسیر رہے۔ پروین شاکر کی غزلوں اور نظموں میں محبت کا تزکرہ ملتا ہے۔

پروین شاکر کی وفات کے بعد ان کی ایک قریبی ساتھی، پروین قادر آغا نے پروین شاکر کے نام پہ ایک ٹرسٹ کھولا۔ پروین شاکر ٹرسٹ ہر سال ایک تقریب منعقد کرواتا ہے اور اس تقریب میں پروین کی اردو شاعری میں لکھی گئی غزلوں اور نظموں کی یاد میں "عکسِ خوشبو" ایوارڈ دیتا ہے۔

اگر پروین شاکر کی تصانیف کا ذکر کیا جائے تو ان کی اردو شاعری کی مشہور تصانیف میں درج ذیل نام آتے ہیں جن میں پروین شاکر کی غزلیں اور نظمیں لکھی گئی ہیں: خوشبو 1976ء ، صد برگ 1980ء ، خود کلامی 1990ء ، انکار 1990ء ، ماہِ تمام 1994ء ، کفِ آئینہ _ ان کی اردو شاعری کی کتابوں کا مجموعہ ، گوشۂ چشم _ ان کے اخبارات کے کالمز کا مجموعہ